’حکومت نواز شریف کی جان لینے پر ڈٹ گئی ہے‘

سابق وزیر خارجہ اور ن لیگ کے سینئر رہنما خواجہ محمد آصف نے الزام عائد کیا ہے کہ پی ٹی آئی حکومت ایک سوچے سمجھے منصوبے کےتحت نواز شریف کی جان لینےپرڈٹی ہوئی ہے۔

سیالکوٹ میں اپنی رہائشگاہ پر پریس کانفرنس سے خطاب میں خواجہ محمد آصف نے کہا کہ حکومت کے پریشر کی وجہ سے ڈاکٹر بھِی اپنی رائے دینے سے ڈر رہے ہیں۔
ان کا کہناتھاکہ حکومت چاہتی ہے نواز شریف کا مرض مزید بڑھے، سابق وزیراعظم کی جان کو خطرہ ہوا تو سیاست میں تشدد کے راستے کھلیں گے۔

سابق وفاقی وزیر نے کہا کہ کل دوپہر کو نواز شریف سے ملاقات ہوئی تھی، جس میں شہباز شریف،مریم نواز اور حمزہ شہباز بھِی شامل تھے، سابق وزیراعظم کو 2دفعہ اسپتال لے جایا گیا لیکن ان کا وہاں کسی قسم کا علاج نہیں کیا گیا صرف بلڈپریشر اور شوکر چیک کی جاتی تھی۔

خواجہ آصف نے یہ بھی کہا کہ میاں نواز شریف کا خیال تھا کہ ان کا علاج ہو گا لیکن ایسا نہیں ہورہا وہ 16 سال سے دل کے عارضےمیں مبتلا ہیں،حکومت میاں نواز شریف سے سیاسی انتقام لے رہی ہے۔

انہوں نے ایک سوال کے جواب میں کہا کہ 2003ءسے جو ان کے معالج ہیں کم ازکم حکومت ان سے رابطہ کرے۔

ن لیگی رہنما نے کہاکہ جب میاں نواز شریف نے لندن سے اپنی سرجری کروائی تب بھی شور مچایا گیا کہ دل کا آپریشن نہیں ہوا یہاں پر بیماری ثابت کرنے کے لیے انسان کو مرنا پڑتا ہے۔

It's only fair to share...Email this to someoneBuffer this pageDigg thisShare on FacebookShare on Google+Tweet about this on TwitterShare on LinkedInShare on RedditPin on Pinterest

Comments

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں