اک بوند تھی لہو کی سر دار تو گری

اک بوند تھی لہو کی سر دار تو گری

یہ بھی بہت ہے خوف کی دیوار تو گری

کچھ مغبچوں کی جرأت رندانہ کے نثار

اب کے خطیب شہر کی دستار تو گری

کچھ سر بھی کٹ گرے ہیں پہ کہرام تو مچا

یوں قاتلوں کے ہاتھ سے تلوار بھی گری

It's only fair to share...Email this to someoneBuffer this pageDigg thisShare on FacebookShare on Google+Tweet about this on TwitterShare on LinkedInShare on RedditPin on Pinterest

Comments

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں